راجن پور ڈاکٹر رومان فیصل نے مریض کو کیا کہا سن کر نہ زمین کانپی، نہ آسمان پھٹا ،قیامت اور کیا ہوگی؟

previous arrow
next arrow
ArrowArrow
Slider

گزشتہ روزذرائع کے مطابق ڈاکٹر رومان فیصل بطور ڈپٹی میڈیکل آفیسر راجن پور ڈسٹرکٹ ہسپتال تعینات ہے ، راشد حسین نامی مریض داخلہ کے لیے آیا تو اس نے ذاتیات کی بنا پر مریض کو فوری طور پر ڈسچارج کرنے کو کہا ، مریض معافیاں مانگتا رہا کہ مجھے علاج کرانے دولیکن ڈاکٹر رومان فیصل نے ایک نہ سنی اور مریض کو فوری طور پر ڈسچارج کرا دیا حالانکہ ڈاکٹر زرخان نے راشد حسین کو فوری طور پر داخلے کے لیے کہا تھا ،
یار رہے کہ راشد حسین گورنمنٹ مڈل سکول ساہن والا کا سیکورٹی گارڈ تعینات ہے اور اپنے والدمحمدصادق کی ان فٹ ریٹائرمنٹ کے بعد نوکری ملی ، لیکن اس سکول کی ہیڈمسٹریس میڈم ساجدہ بی بی نے سکول کا میٹر بجلی کے نادہندہ ہونے کی وجہ سے کٹا ہوا ہونے کی وجہ سے راشد حسین کو کہا کہ بجلی کی تار کوجوڑ دو اس پرراشد حسین نےکہا کہ میں بجلی کے کام سے واقف نہیں ہوں اور جب انکار کیا تو نوکری سے فارغ کرنے کی دھمکیاں دینے لگیں ، چنانچہ راشد حسین کو تار لگانے پر مجبور کردیا ، تار غلط لگنے کی وجہ سے راشد حسین کے کپڑوں کو آگ لگ گئی جس سے 40 فیصد سے زائد جھلس چکا تھا ، اہلیان علاقہ فوری طور پر مدد کے لیے آئے ایک معلمہ نے ترس کھا کر 1122 پر فون کیا اتنے میں علاقہ میں موجود ا یک ڈسپنسر نے فوری طبی امداد فراہم کی چنانچہ راشد حسین کو ڈسٹرکٹ ہسپتال راجن پور لایا گیا یہاں پر اس کا ایمرجنسی میں فوری علاج کیا گیا اور برن سنٹر ڈیرہ غازی خان ریفر کیا گیا ، وہاں ایک ہفتہ علاج کے بعد واپس آیا لیکن ڈاکٹروں نے کہا کہ مریض کو مکمل طور پر اے سی میں رکھا جائے تاکہ زخموں کی جلن کم سے کم ہو مریض کا والد بیمار غریب آدمی ہے اس کے پاس پیڈیسٹل فین خریدنے کی فرصت نہیں اے سی کہاں سے خریدتا ،
چنانچہ کچھ دن قبل زخموں میں زیادہ تکلیف کے باعث راشد حسین بے ہوش ہوا تو دوبارہ 1122 کے ذریعے ڈسٹرکٹ ہسپتال راجن پور لایا گیا ، وہاں ڈاکٹر زرخان نے مریض کے زخموں کی حالت دیکھتے ہوئے وارڈ میں ایڈمٹ کرنے کا حکم دیا تو مریض کو اے سی روم میں شفٹ کیا گیا کچھ سکون میسر ہوا اور ایک امید کی کرن ظاہر ہوئی کہ اب میرے بیٹے کا علاج ہوجائے گا ،
ایک گھنٹے کے بعد ڈاکٹر رومان فیصل آگیا اور کہا کہ اس کو فوری ڈسچارج کردو اس کی حالت ٹھیک ہے اس کو باہر نکالو ،کیونکہ ڈاکٹر رومان فیصل اسی ہیڈمسٹریس کا بھانجا ہے جس کی وجہ سے راشد حسین کی یہ حالت ہوئی اس معاملے کی بابت صادق حسین نے ایک درخواست صوبائی محتسب اعلی کو بھی گزاری ہے اور انصاف کے لیے دربدر کی ٹھوکریں محمد صادق کھا رہا ہے جبکہ راشد حسین اب انتہائی تکلیف میں ہے اور اس کا دوسرا بازو بھی ٹوٹ گیا ہے جلن کے زخموں کی وجہ ہر دوگھنٹے بعد اس کو نشے کے انجکشن لگائے جاتے ہیں اورمحمد صادق ایک غریب آدمی ہے اپنے بیٹے کے علاج کے لیے کہیں نہیں لے جاسکتا ،
وزیراعلی پنجاب میاں شہباز شریف سے محمد صادق اپیل کرتا ہے کہ اس کے بیٹے کامکمل علاج کرنے دیا جائے وہ کسی کے خلاف کوئی کاروائی نہیں کرنا چاہتا ، مدد کی اپیل ہے ( والد محمد صادق 03357472417)

رابطہ نمبر : 03336444089

ہماری خبر پر نوٹس والے اداروں سے گزارش ہے کہ یہ ابتدائی معلومات اور تجزیہ کے طور پر اطلاع فراہم کرنا ہم اپنا فرض سمجھتے ہیں ، اس پر ایکشن لینے سے پہلے ہمارے قوانین اور پرائیوسی پالیسی کو ضرور پڑھ لیں ،مزید معلومات کے لیےدیئے گئے نمبر پر رابطہ کریں ، شکریہ

اپنا تبصرہ بھیجیں